گھانا کا ڈالر کے بجائے سونے کے عوض تیل خریدنے کا فیصلہ


گھانا کی حکومت امریکی ڈالرز کے بجائے سونے کے عوض تیل کی مصنوعات خریدنے کے لیے ایک نئی پالیسی پر کام کر رہی ہے۔

یہ بات گھانا کے نائب صدر محمودو بوومیا نے اپنے ایک بیان میں کہی، ان کا کہنا تھا کہ حکومت کے اس اقدام کا مقصد ڈالر کی مانگ کے ساتھ ساتھ گھٹتے ہوئے غیرملکی کرنسی کے ذخائر سے نمٹنا ہے جس کی وجہ سے مقامی معیشت کمزور ہورہی ہے اور ملکی اخراجات میں بھی اضافہ ہو رہا ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق نہوں نے وضاحت کی کہ حکومت کے اس اقدام کا مقصد بڑھتی ہوئی افراط زر اور کمزور ہوتی مقامی کرنسی کے درمیان کم ہوتے غیرملکی زرمبادلہ کے ذخائر سے نمٹنا ہے۔

گھانا کے مجموعی بین الاقوامی ذخائر ستمبر 2022 کے اختتام پر تقریباً 6.6 بلین ڈالر تھے، جو تین ماہ سے بھی کم درآمدات کے احاطہ کے برابر ہیں۔ گھانا حکومت کے مطابق یہ گزشتہ سال کے آخر میں تقریباً 9.7بلین ڈالر سے کم ہے۔

اپنے بیان میں بوومیا نے کہا کہ اگر2023 کی پہلی سہ ماہی کے لیے منصوبہ بندی کے مطابق لاگو کیا جاتا ہے تو نئی پالیسی ہماری ادائیگیوں کے توازن کو بنیادی طور پر تبدیل کردے گی اور ہماری کرنسی کی مسلسل گراوٹ کو نمایاں طور پر کم کر دے گی۔

انہوں نے واضح کیا کہ سونا استعمال کرنے سے شرح مبادلہ کو براہ راست ایندھن یا یوٹیلیٹی کی قیمتوں پر اثر انداز ہونے سے روکا جائے گا کیونکہ گھریلو فروخت کنندگان کو تیل کی مصنوعات درآمد کرنے کے لیے مزید زرمبادلہ کی ضرورت نہیں ہوگی۔ انہوں نے مزید کہا کہ تیل کے لیے سونے کا بارٹر ایک بڑی ساختی تبدیلی کی نمائندگی کرتا ہے۔

گھانا خام تیل پیدا کرتا ہے لیکن 2017 میں ایک دھماکے کے بعد اس کی واحد ریفائنری بند ہونے کے بعد سے اس نے ریفائنڈ تیل کی مصنوعات کی درآمد پر انحصار کیا ہے۔

بوومیا کا اعلان اس وقت پوسٹ کیا گیا جب وزیر خزانہ کین اوفوری عطا نے قرضوں کے بڑھتے ہوئے بحران سے نمٹنے کے لیے اخراجات میں کمی اور محصولات کو بڑھانے کے اقدامات کا اعلان کیا۔


About admin

Check Also

ٹی ڈی اے کے سابق سربراہ ایس ایم منیر انتقال کرگئے

کراچی: شہر قائد کی معروف کاروباری شخصیت ایس ایم منیر مختصر علالت کے بعد خالق …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *