ایک ہفتے میں امریکی ڈالر دھڑام سے نیچے جا گرا، روپیہ مستحکم


کراچی: اکتوبر 2022 کے پہلے ہفتے کے دوران پاکستانی روپیہ امریکی ڈالر کو روندتا ہوا تیزی سے مستحکم ہوا اور اس میں اضافہ جاری ہے، ایک ہفتے کے دوران ڈالر کی قدر میں 19 روپے سے زائد کمی ہوئی۔

تفصیلات کے مطابق اکتوبر کے پہلے ہفتے (three سے 7 اکتوبر 2022) میں انٹر بینک مارکیٹ میں ڈالر eight روپے 53 پیسے سستا ہوا، جس کے بعد ایک ہفتے کے دوران ڈالر 228.54 روپے سے کم ہو کر 219.92 روپے کا ہوگیا۔

انٹر بینک مارکیٹ میں ڈالر بلند ترین سطح 239.71 روپے پر پہنچنے کے بعد سے اب تک 19 روپے 79 پیسے سستا ہوچکا ہے۔

اوپن بینک میں بھی ڈالر eight روپے سستا ہوا، ایک ہفتے میں اوپن مارکیٹ میں ڈالر 230 روپے سے کم ہو کر 222 روپے پر پہنچ گیا۔ اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی سطح 245 روپے تک جا پہنچی تھی جس کے بعد اس میں 23 روپے کی کمی ہوئی۔

خیال رہے کہ ڈالر کی قیمت میں کمی وزیر خزانہ اسحاق ڈار کے وزارت کا چارج سنبھالنے کے بعد دیکھی جارہی ہے۔

اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہا تھا کہ ڈالر کی اس وقت جو قدر ہے وہ حقیقی نہیں، امریکی کرنسی کی اصل قدر 200 روپے سے کم ہے، ڈالر کو اصل قیمت پر لانے کے لیے جامع حکمت عملی بنا رہے ہیں۔

وزرات خزانہ کی سٹے بازی پر کڑی نگاہ رکھنے اور ہر قسم کے زرمبادلہ کے لین کی مانیٹرنگ کے باعث زرمبادلہ کی دونوں مارکیٹوں میں بلا جواز ڈالر کی خریداری سرگرمیاں منجمد ہوگئی ہیں۔

صرف اہم درآمدات کے لیے کھولی جانے والی ایل سیز یا اہم ترین ضروریات تک ڈالر کی خریداری محدود ہوگئی ہے۔

بینکوں کی ناجائز منافع خوری

دوسری جانب ذرائع وزارت خزانہ کا کہنا ہے کہ گزشتہ چند ماہ میں ڈالر کی قیمت میں اضافے کے دوران نجی بینکوں نے خوب فائدہ اٹھایا، نجی بینکس نے اس دوران 56 ارب روپے کا منافع کمایا۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ ڈالر کی قیمت میں اضافے پر اسٹیٹ بینک نے نجی بینکوں سے تحقیقات کا فیصلہ کیا ہے، اسٹیٹ بینک نے eight نجی بینکوں کو نوٹسز بھی جاری کردیے ہیں، اسٹیٹ بینک کی تحقیقاتی رپورٹ جلد مکمل ہوجائے گی جو وزیر خزانہ اسحاق ڈار کو پیش کی جائے گی۔

About admin

Check Also

ٹی ڈی اے کے سابق سربراہ ایس ایم منیر انتقال کرگئے

کراچی: شہر قائد کی معروف کاروباری شخصیت ایس ایم منیر مختصر علالت کے بعد خالق …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *