سندھ کے ہزاروں کسان اور مزدور بیروزگار

سندھ سمبلی نے مالی سال 2020 -21 کا بجٹ کی شور شرابے میں چند لمحوں میں منظوری دیدی, قائد اور وزیر اعلی سندھ نے جن پا س وزارت کا قلمدان بھی ہے ایوان میں ضمنی مطالبات زر پیش کئے گیا. اپوزیشن ایوان میں موجود تھی وہ احتجاج اورنعرے بازی کرتی گئی لیکن اس کی کسی نے آغا سراج مانی یکا ن کیمان ی ا تھن کہ ن سن

ایم کیو ایم پاکستان کے ارکان کے اپنے ہاتھوں پلے لے کر کھڑے ہوگئے جن مختلف احتجاجی نعرے درج نے ایوان میں بازی کا اسپیکر نے قائد ایوان مراد علی شاہ کو ایوان میں ضمنی بجٹ پیش اعلی سندھ نے مالی سال 2020-21ءکے لئے 95 ارب 34 کروڑ روپے مالیت کے مطالبات ایوان میں پیش ایوان ان مطالبات زر کی منظوری دے دی۔

اپوزیشن کی جانب سے کٹوتی کی تحریک کی, نے سندھ اسمبلی سے بجٹ منظور کرانے لئے جو حکمت عملی تھی وہ کامیاب اور سندھ اسمبلی کی ہے کہ بجٹ پر حزب ایوان دونوں کو بجٹ کی منظوری سے قبل پارلیمانی مطابق تقریرکرنے کا موقع نہیں ملا پارلیمانی اور وزراءبھی اظہار خیال سے محروم رہے۔سندھ اپوزیشن کے چند بجٹ پاس کرالیا۔

سندھ اسمبلی میں منقسم اپوزیشن کے پیپلز مل گیا.ایم اپوزیشن رکن نے بجٹ تجاویز ووٹنگ میں حصہ نہیں ٹی آئی کے سندھ اسمبلی پیپلز پارٹی نےغیر جمہوری سے بجٹ منظور کرواکر بدترین تاریخ رقم کی. اجلاس کے بعدسندھ اسمبلی میں ایم ایم کے لیڈرکنور نوید جمیل اے کے پارلیمانی لیڈر بیرسٹر مرزا نے پریس کانفرنس کرتے کہا کہ پیپلز, اپوزیشن رہنماؤں نے عندیہ خاموش نہیں رہیں

کنور نوید جمیل نے کہا کہ اس بجٹ میں بھی ماضی کی طرح علاقوں کیلئے کوئی تر قیاتی اسکیم نہیں رکھی گئی ہے۔ ایم کیو ایم کے پارلیمانی لیڈر نے کہا کہ شیخ کو ہمارے احتجاج میں شامل چاہیئے مگر انہوں نے ایسا کیا.انہوں نے کہا ڈنکے کی رہےانہوں کہ ان کا کہنا تھا کہ ہم سندھ حکومت کے بجٹ اخراجات کو سمجھتے ہیں اورہم اب احتجاج کو اسمبلی سے باہر سڑکوں پر لے جائیں گے۔

اس موقع پر جی ڈی اے کے پارلیمانی لیڈر نے کہا کہ پیپلزپارٹی جب اپوزیشن تھی تو اس نے بجٹ کو آگ لگائی تھی سویلین ڈکٹیٹر نے کہا کہ پیپلزپارٹی ڈپٹی اسپیکر کے روسٹرم پر چڑھ کر اس کاتقدس پامال کیاتھا.حسنین مرزا نے کہا کہ ایوان میں بند کی گئی تو سندھ کے گلی کوچے میں جائیں گے۔

جبکہ صوبائی وزرا ناصر حسین شاہ غنی نے کہ اپوزیشن ارکان کو بجٹ موقع دیا گیا شور شرابہ سے مخلص. تو, بجلی, مردم شماری پر احتجاج کرے سندھ اسبلی میں تقسیم اور نا تجربہ کاری کا نے بھر پور فائدہ کہا جا رہا آنے والے آنے بلدیاتی اپوزیشن ایک دوسرے کی سخت حریف بھی ہو گی.

دوسری جانب ایم کیو ایم بھی کر کے خلاف ہو گئی ہے ایم کیو ایم کے ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی نے پریس کانفرنس ٹس دینے جا رہے ہیں اس صرف کا رکنان ہو نگے آپ یہ پیغام کہ ہم سڑ ک پر آچکے ہیں نے ہر اچھے برے میں کا ساتھ ہے پاکستان کی حرمت کو بچانے کیلئے ہم دن سمجھیں گے اور ہم یوم بلکہ ما ہ آزکیادی منا ئیں ابھی کلچا ئیں ابھی کلھیا ئیں ابھی کلھیا بج بہ ب ب ھیتہت رہی ب حثتہت رکی ہی بب ب ب ست ت ب بحث ستہت ہی ہجرت اور مہاجر ثقافت کو اجاگر کیا جائیگا۔

ادھر وفاق اور سندھ کے درمیان کے اختلافی ایشوز ہو رہے ہیں صوبائی وزرا ناصر اور سعید غنی نے یس کانفرنس ایک کروڑ نوکریاں والوں اور ہزاروں بند اور مزدوروں کو بے روزگار کردیا ہے. صوبائی وزیر سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ سندھ پاکستان کا اٹوٹ حصہ ہے ، خدارا سندھ کے عوام سے زیادتیاں بند

سندھ کے عوام کے دل جیتنے لیے سے طرف پانی, گیس اور بجلی کی کو نشانہ بنایا رہا ہے پر نظر انداز کر دیا کئی سال سےرینی کینال, گاج ڈیم, جامشورو -سہون ہائی وے سمیت کئی اہم منصوبوں پر کئی سالوں سے کام مکمل نہیں ہو ا۔



About admin

Check Also

کیا مشکل معاشی فیصلوں کا نقصان ’’ن لیگ‘‘ کو ہوگا؟

اس حقیقت کے باوجود کہ اپوزیشن کی جانب سے بڑے بڑے عوامی اجتماعات ٗ جلسے …

Leave a Reply

Your email address will not be published.