کٹھ پتلی وزیراعظم کشمیر کے سفیر بننے کے بجائےکلبھوشن کے وکیل بن گئے ، بلاول بھٹو

چیئرمین پاکستان پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ کٹھ وزیراعظم عمران خاین نے وعہہ کیا تھو لوگےدہ کیا تھو لوگےدہ کیا تھو ھ ب

انہوں نے کہا کہ انہیں سخت افسوس ہے کہ اس موقع کے ساتھ کشمیر اسمبلی کے اسپیکر نہیں ، لیکن ان کے ہ اوجد مو وق سر س

اتوار کے روز انتخابی مہم کے سلسلے میں ہجیرہ پہنچے۔ ان کے ساتھ پارٹی رہنما قمر زمان کائرہ, چودھری لطیف اکبر, یعقوب خان, سردار سعود صادق, فیصل راٹھور, سردار امجد یوسف, سید بخاری, سردار رئیس انقلابی اور عنایت اللہ عارف بھی

ہجیرہ کے مقام پر ایک کارنر میٹنگ سے خطاب کرتے ہوئے چیئرمین بلاول کہا کہ پی پی پی کا کشمیر سے رشتہ ہےتین نسوں کا چیئرمین بلاول نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر کے عوام مودی کے ظلم ہندوتوا کے فلسفے کے خلاف اہیںرہے ہیں ،م جبکہ مر م جبکہ کشمیر ن م جبکہ کشمیر ن م جبکہ کشمکشر ن ن م عر لو گ اس وقت تاریخی مہنگائی ، غربت اور بیروزگاری کا شکار ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان پیپلز پارٹی نے کشمیر میں پارلیمانی نظام متعارف کرایا ، تاکہ یہاں کے اپا ےاں کے اپا ےا کے اا ےا پ اس وقت مسئلہ یہ ہے کہ ایک کٹھ پتلی کشمیر کے بارے فیصلے کررہا ہے۔ اس کٹھ پتلی نے کلبھوشن یادیو کے لئے رات کی تاریکی میں ایک آرڈیننس جاری کیا۔ تاکہ اسے این آر او دے سکے۔ جب کلبھوشن نے ان این آر او کا فائدہ اٹھانے سے انکار کر دیا تو اب یہ اس این آراو کو پارالیمنٹ میں لا ا

انھوں نے کہا کہ کٹھ پتلی یہ کہ شہید بھٹو نے کشمیریوں کے لئے ایک ہزار تک لڑنے کی بات اور شہید ھٹںو نے اگاے ۔ا ا ا با با بم بحیثیت ن اوحیثیم بحیثیت ن او ب

بلاول بھٹو نے کہا کہ شہید ذوالفقار علی بھٹو نے کو کو طاقت بنایا اور شہید محترہیںمہ بھٹو نے میزا یہئ ن ن کہکہا یہل کٹھنال تیت ر

چیئرمین پی پی نے کہا کہ کشمیری پیپلزپارٹی کا ساتھ دیں گے انہوں نے فیصلہ کر لیا ہے اپنے فیصلے خود کریں گے۔ پاکستان اور کشمیر کے عوام اس ناکام اور نااہل وزیراعظم کی وجہ سے معاشی بحران کا شکار ہیں۔ ہم نے دنیا میں کساد بازاری کے دور میں اور دہشتگردی اور مقابلہ کرتے ہوئے اپنی معیشت چلائی تھیااکے ل رست م ہم نے سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں 120 فیصد ، پنشن میں 100 فیصد اور دہشتگردی کا مقابالہ کرنے وفہالےایںا خمو مو ۔مو اا م و 175

سہنسہ کے مقام پر چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے خطاب ہوئے کہا کہ میں آج یہاں آپ سے امیدوار کے مک قکادوار کےمم کیںکوٹ ما مور لر کیں مر لموو وو من سنے تر آپ نے جب شہید ذوالفقار علی بھٹو کا ساتھ دیا تو رقم کی اور جب محترمہ بینظیر بھٹو شہید تخو مسلزیم الظوا کی و مسلظم اعظوا کی ن ب توت تر ہمارے کشمیری بہن بھائی مقبوضہ کشمیر اور آزاد کشمیر دونوں میں بہت مشکل حالات کا سامنا کر رہے ہیں۔

بلاول بھٹو نے کہا کہ دنیا کو پتہ ہے مقبوضہ کشمیر کے عوام پر مودی کی حکومت ظلم کر رہی ہے۔ مقبوضہ کشمیر پر تاریخی حملے کے وقت کٹھ پتلی وزیراعظم نے ان کو لاوارث چھوڑ دیا۔ پی پی پی کبھی بھی کشمیریوں کو اکیلا نہیں چھوڑے گی۔ جب عمران خان جیسے کٹھ پتلی اور بزدل کشمیر کے لئے فیصلے کرتے ہیں تو کشمیر کو نقصان پہنچتا ہے۔ چیئرمین بلاول بھٹو نے کشمیر کا سودا نامنظور کے نعرے لگوائے۔ اور کہا کہ ہم آزاد کشمیر کے عوام کے حقوق پر کبھی سودا نہیں کرنے دیں گے۔

انہوں نے کہا کہ ہم سمجھتے ہیں پاکستان میں جو بجٹ پیش کیا ہے وہ بھی کشمیر کے عوام کے حقوق پر ڈاکہ ہے۔ وہ آپ کے انرجی کے منصوبوں پر ٹیکس لگانا چاہتے ہیں ، کشمیریوں پر صرف کشمیر کی حکومت ٹیکس لگا سکتی ہے۔ اگر ہمیں عمران خان کی مہنگائی کی سونامی سے لوگوں کو بچانا ہے تو پی پی پی کے امیدواروں کو جتوانا ہوگا۔ اگر ہم نے یہ کام کرنا ہے تو ہمیں بشیر صاحب جیسے امیدواروں کی ضرورت ہے۔ آپ نے پی پی پی کے منشور کو گھر گھر لے کر جانا ہے۔ اگر ہم نے کشمیر میں روزگار ، تعلیم ، صحت وغیرہ کشمیر کے عوام تک ہے تو پی پی پی کے امیدواروں کو ووٹ دین ہے۔

چیئرمین پی پی نے کہا کہ ہم آپ کے حقوق کا بھی تحفظ کریں گے اور کشمیر کے بہن بھائیوں کا بھی سہارا بنیں گے۔ پی پی پی وہ واحد جماعت ہے جو مودی پر سمجھوتہ نہیں کرتی۔ ہماری قیادت نہ آج تک مودی سے ملی ہے ، نہ اس سے ہاتھ ملایا ہے وہ آپ کے دشمن ہیں ویسے ہی ہمارے دشمن ہیں۔ ہم اسے خوشیاں منانے کے لئے اپنے گھر نہیں بلاتے۔ ہم پچھلے انتخابات میں یہاں آئے تھے اور مودی کے یار کے خلاف نعرہ لگایا تھا۔ اس وقت ہمیں کہا گیا کہ پی پی پی تو پر امن جماعت ہے آپ یہ بات کیسے کر رہے ہیں۔ اب پوری دنیا پہنچا ن رہی ہے ، اب ن لیگ اور عمران خان بھی مانتے ہیں کہ فاشسٹ ہے ، ہندتوا ہے ، آر ایس یاس ہے۔۔ ا

انہوں نے کہا کہ اگر یہ لوگ اس وقت میری بات مان لیتے تو شاید ہم اس مشکل حالات کا سامنا نہ کر رہے ہوت قائد عوام تو کہتے تھے کہ وہ اپنی نیند میں بھی غلطی نہیں کر سکتے اور یہ پتلی جب بھی کشمیر پر بولےل ک توضر ر توضر جب بھار ت میں انتخابات ہو رہے ہیں تو مودی کی انتخابی خان چلا رہے تھے اور کہتے تھے جیتے گا ، تلا جمر و حا مس کشمیر کا سفیر بننے کا دعویٰ کرنے والے کلبھوشن کے وکیل بن رہے ہیں۔ جب کشمیر پر ظلم ہوتا تھا تو قائد عوام اسٹرائیک کی کال دیتے تھے تو پورا مقبوضہ کشمیر بند ہو جاتا تھا۔

جلسوں سے خطاب کرنے سے پہلے بلاول بھٹو زرداری نے حلقہ LA-10 کے پیپلزپارٹی کے مرکزی دفترکا افتتاح کیا۔ انہوں نے تتہ پانی کے مقام پر استقبال کے لئے جمع ہونے والے پارٹی کارکنوں سے مختصر خطاب کیا۔

انہوں نے دربار ربیاں شریف میں میاں الف دین اور میاں محمد قاسم کی درگاہ پر بھی دی اور ملکیا دی اور ملکی سلا متیاور عآزمد عآزمد عآزمد عآزمد عآزمد عآزمد عآزمد عآزمد عآزمد عآزمد عآزمد عآزمد عآزماو



About admin

Check Also

عمران خان نے جہاں ہاتھ ڈالا وہاں تبدیلی نہیں تباہی آئی، بلاول بھٹو

پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ …

Leave a Reply

Your email address will not be published.