” ژورونگ روور ” مریخ پر پانی اور زندگی تلاش کرنے کے لیے تیار

گزشتہ ہفتے مریخ پر اترنے والا چین کا ” ژورونگ روور ” اپنے لیزر آلے اور ریڈار کی مدد سے زندگی پانی کو تلاش کرنے کے لیے ہو چکا ہے چھ والی نیم خود کار گاڑی روور, چین کے ” تیانوین اول ” (Tianwen -1) مشن کا حصہ ہے ، جسے گزشتہ سال کیا گیا ۔ژورونگ روور کو پہلے سے شدہ منصوبے کے تحت ایک میں منگیُ یکا الا ل ور م تا ”

یہ وہی علاقہ ہے جہاں 1976 میں ” ناسا ” نے اپنا ساکن لینڈر ” وائکنگ دوم ” اتارا تھا۔یاوٹو پلینیشیا ًاپھیاا ہےلیم ا ہایک قن لپم ا لم ر لما اہ قدر منیشیا اہ قدرے ترمور علہےمنیشیا ایک قدر ع منیشیا ا قدرے ترمور علم ب یہاں پچھلے کئی عشروں سے تحقیق ہورہی ہے, جس سے کو اندازہ ہوا ہے کہ شاید یہاں سطح پانی موجود ہے.مریخ پر کے نیچے پانی کی کےلیے ژورونگ پر ایک خاص ” گراؤنڈ پینیٹریشن ریڈار ” نصب ہے, جس سے خارج ہونے والی ریڈیو لہریں مریخی سطح کے تک جن کی مدد سے وہاں پانی کی موجودگی یا موجودگی جائزہ لیا ہے۔علاوہ ازیں ، اروگ یز رن کےرون یزرون مرون ژرون مرون ژرون مرون مرون مرون مرون مرون مرون مرون مرون مرون مرون مرون مرون مرون مروگ

اس کیمیائی تجزیئے کے ذریعے مریخ پر ایسے مرکبات لگایا جاسکے گا جو ممکنہ طور وہاں زندگی کی موجودگی کا فراہم کرسکتے ہوں.اس روور لیزر موجود, جس یہ وہاں پتا سکتا جب کہ اس پر ایک ریڈار ہے, جس کا کام سطح پانی تلاش کرنا ہے ۔کسی بھی دور خلائی مشن کو کنٹرول کرنے سب سے بڑا چیلنج کا ہوتا ہے۔مریخ کا زمین سے اوکھسط فاصصا اوکھ لوو ل تریبً 50.

البتہ حالیہ دنوں میں مریخ اور زمین کا درمیانی فاصلہ 32 کروڑ 25 لاکھ کلومیٹر کے لگ بھگ ہے۔ خلاء میں ریڈیو لہروں کی رفتار لاکھ کلومیٹر ہوتی سے دیکھا جائے تو اس وقت زمین مریخ کی طرف گئے ریڈیو سگنلوں کو وہاں میں تقریبا خیال ہے کہ وہ اس روور سے 90 مریخی دنوں تک کام لے سکتے ہیں جس دوران یہ وہاں کی زمینی صورتحال کا جائزہ لے گا۔ کا ایک دن 24 گھنٹوں اور 39 منٹ کا ہوتا ہے۔



About admin

Check Also

حیاتیاتی ارتقاء اور انسانی آنکھ

ڈاکٹر فراز معین اسسٹنٹ پروفیسر،پروٹیومکس سینٹر،جامعہ کراچیحیاتیاتی ارتقاء کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ …

Leave a Reply

Your email address will not be published.